")
ماه رمضان

ان مسائل میں سے جن کی رمضان المبارک کے مہینہ میں بہت زیادہ تاکید کی ھے اور اھمیت دی گئی ھے ایک یہ ھے کہ فقراء، مساکین اور کمزوروں پر خاص توجہ دی جائے جن لوگوں کے پاس دولت اور مالی امکانات پائے جاتے ھیں، انھیں چاھئے کہ ھمیشہ اور خاص طور سے اس مبارک مہینہ میں فقراء و مساکین کو مدد پہنچانے کی فکر میں رھیں ۔

ھمارا انقلاب مستضعفین اور کمزوروں کے منافع کی ضرورتوں کو پورا کرنے کے لئے برپا ھوا ھے ۔  ھمارا نظام، مستضعفین کی حمایت کا نظام ھے، ھمارا نعرہ بھی مستضعفین کی حمایت کا نعرہ ھے اور ھم نے مستضعفین، پا برھنہ افراد، پسماندہ لوگوں، ناداروں، بے لباس اور محروموں سے جو وعدے کئے ھیں، رمضان المبارک کے مہینہ میں ھمیں ان کے پورا کرنے، ان کی کمیوں کو دور کرنے اور ان کی امداد کی کوشش کرنی چاھئے تاکہ ان کے رنج و غم اور آلام میں کمی ھوسکے ۔

اسلام کے عظيم الشأن رھبروں نے ھمیں حکم دیا ھے: رمضان المبارک کے مہینہ میں لوگوں کو افطار دیں، انھیں کھانا کھلائیں ۔ یہاں تک کہ اگر لوگوں کو کھانا کھلانے کی مالی توانائی نہ رکھتے ھوں، تو کم از کم پانی ھی پلا دیا کریں ۔ اس مہینہ میں اپنے ما تحت لوگوں پر رحم کریں ۔ اس ماہ میں اپنے خدمت گزاروں کو موقع دیں تاکہ آرام و سکون مل سکے اور اپنی ضرورتوں و عبادتوں کو انجام دے سکیں ۔

 خلاصہ کے طورپر یہ کہ رمضان المبارک کا مہینہ مستضعفین و کمزوروں کی مدد کرنے کا مہینہ ھے، وھی افراد جن کی مدد کے لئے ھمارا نظام، ھمارا شعار، ھمارا انقلاب اور ھمارا وعدہ تھا ۔